پنک PINK

“پنک” PINK
جب بارشیں حالات زندگی مفلوج بنادے، اور گھر میں رہنا ضرورت بن جائے تب اپنی روٹین لائیف کو مینیج کرنے کے لیئے ضروری بن جاتا ہے کے کسی طرح وقت کو بہترین بنایا جائے، جو باذوق بھی ہو اور بامقصد بھی ـ اس لیئے ایک مووی ” پنک ” کا انتخاب کیا جس کا رویو دوستوں کے ساتھ شیئر کرنا مناسب سمجھتا ہوں ـ
اس مووی میں کلاس کی نشاندہی کی گئی ہے، کس طرح ایک عام کلاس کو ہائے کلاس زمیں تلے دبونے کے طریقے اپناتے ہیں، معاشرے کی وہ گندگی دکھائی گئی ہے جس کو اسیپٹ کرنا بہت مشکل ہے، ایک لڑکا رات کو گیارہ بجے گھر آتاہے تو نارمل جب لڑکی آئے تو کوئی چکر، لڑکی چہرے پر مسکراہٹ ڈالے تو کوئی اور رنگ جب لڑکا کرے تو نارمل، یے واقعی ایک ناانصافی ہے، اس مووی میں سارے ثبوت لڑکی کو دوشی ثابت کرتے دکھائے گئے ہیں جب کے آخر میں “نو No” کی وضاحت پر فیصلہ لڑکی کے حق میں تو آجاتا ہے لیکن میرا نہیں خیال کے اس طرح کے فیصلے ہمارے خاص پاکستاں، انڈیا، یا پھر بنگلادیش میں ہوتے ہونگے، بحرحال ایک وضاحت ہے قانون امیر کے لیئے ایک اور غریب کے لیئے دوسرا ہوتا ہے ـ
یے اسٹوری ایک سوشل اشو پر مبنی ہے، جس میں تین آزاد لڑکیاں منال، فلک، اینڈرا، جو شہر میں جاب کی نسبت ایک ساتھ رہتی ہیں ان کی ملاقات کسی طرح سے پارٹی میں کچھ لڑکوں کے ساتھ ہوتی ہے، جہاں پر وہ شراب پی کر نشے میں آجاتی ہیں، وہیں منال سے ریپ کی کوشش کی جاتی ہے، جس کے جواب میں منال شراب کی بوتل اس کی منہ پر ماردیتی ہے جس سے رجویرسنگھ شدید زخمی ہوتا ہے اور غصے کی آگ میں انتقامی سوچ شروع کردیتا ہے، اور اس طرح فلک کے پوسٹر بناکے اس کی جاب چھڑوائی جاتی ہے، اور جہاں یے تینوں رہتی ہیں اسی مالک مکاں کو بھی دھمکی دے کے ان سے مکاں چھڑوانے کی کوشش کی جاتی ہے، بحرحال رجویر سنگھ ایک پولیٹیشن کا بھتیجہ ہوتا ہے اور وہ الٹا قانون میں منال کے اوپر قتل کی کوشش کا مقدمہ درج کرواتا ہے، جس سے وہ جیل جاتی ہے، اور اس پر مکمل کیس چلتا ہےـ
مووی بیشک گھر، اور کورٹ تک گھومتی ہے لیکن بہت سبق آموز ہے خاص ان بہنوں کے لیئے جو لڑکوں کی دلاسوں میں اپنا وقت ضایع کرتی ہیں، عزت اور ذلت الله کے ہاتھ ہے جب تک انسان کسی کی عزت خراب کرنے کا نہ سوچے لحاظا اس مووی سے ہم سب کو سبق سیکھنا چاہیئے ـ
اردو لکھائی معذرت ـــ

#PINK

“تھپڑ THAPPAD “

” تھپڑ THAPPAD “

سپوز کریں آپ اپنے آپ کو معاشرے کے اچھے اسٹینڈرڈ کو مینٹین کرنے کی صفوں میں سمجھتے ہیں ، اور زندگی کی ہر بہار کو اپنے لیئے چاہتے اور اس کی کوشش میں لگے پڑے رہتے ہیں اور اس طرح اُسی کلاس کے لوگوں کے ساتھ آپ کا مل بیٹھنا ہورہا ہے اچانک ایک ایسے کلاس کی لوگوں کی پارٹی میں آپ کی عزت اچھالی جائے، آپ کو سرمحفل میں یے احساس ہورہا ہو کے آپ اس محفل کے چارچاندوں میں سے تھے اور اب انتہا کے گھٹیا تریں میں سے بن گئے پھر آپ کے اوپر کیا گذرے گی؟ یقینن سب کا جواب ہوگا بیحد بُرا، اتنا برا کے آپ چاہیں گے اس واقعے سے پہلے میں کسی حادثے کا شکار ہوکے مر کیوں نہ گیا ، ہمیشہ میرے ساتھ ہی ایسا کیوں ، مینے زندگی کی بہاریں ہی کیا دیکھی ہیں جو میرے ساتھ ایسا ہوا ـ
تپسیہ پانو(امرتا) اور پویل گلاتی (وکرم ) ایک مکمل خوشی سے شادی کا بندھن نبہارہے ہیں، گھر میں وکرم کے پروموشن کی پارٹی رکھی جاتی جہاں پر اچانک وکرم کو فون آتا ہے کے آپ لنڈن تو جائیں گے لیکن کسی گورے کے نیچے کام کرنا ہوگا ـ غصے کی حد اتنی بڑھ جاتی ہے کے وکرم اپنی بیوی امرتا کو تھپڑ ماردیتا ہے ـ اس کو بیس بنا کے مووی میں مختلف کہانیاں دکھائی گئی ہیں جس میں ہر جگہ عورت کو کمپرومائیز کرتے دکھایا گیا ہے اور آخر مرد کو کمپرومائیز کروانے پر مکمل کیا جاتا ہے ـ پہلے سمجھ آتا ہے اتنی سی بات پر اتنا بڑا رشتہ خراب کرنا عقل کی کمی کی نشاندہی کرتا ہے لیکن اس کا ہی کلائیمیکس رکھا گیا ہے آخر کیا وجہ ہے ـ جو آپ خود ملاحضہ فرمائیں
مووی میں وکلا برادری کے کارنامے بھی دکھائے گئے ہیں کس طرح وہ کلائنٹس کو مختلف طور طریقے بتا کے کیس میں نمک مرچ ڈلواکر کیس کو اختتام پر پہنچاتے ہیں ـ
ڈائلاگ، سیناریو، لائف اسٹائل آل کلاس ہے، مووی میں فوکسڈ پوائنٹ ہر رشتہ فراڈ ـ دھوکا ہوتا ہے اسے جوڑ کے رکھنا ضروری ہوتا ہے ـ رشتے وہ بندہن ہے جو ساتھ ہونے سے قدر نہیں ہوتی جب ٹوٹتے ہیں تب انسان کا اندر ٹوٹ جاتا ہے خواہ وہ میاں ہو بیوی ہو، بہن، بھائی، کزن اینڈ آل، بس ان کے ٹوٹنے سے سے حوصلا ٹوٹ جاتا ہے انسان کے اندر جو ہمت، جرئت ہوتی ہے جس پر وہ ناز کرتا ہے اس کا دھاگہ ٹوٹ جاتا ہے، سب کچھ رہ جاتا ہے وہ رشتے باقی نہیں رہتے ـ سبق آموزی ہے کے رشتوں کو جوڑتے رہو نبہاتے رہو اس سے پہلے تم خود نہ ٹوٹ جاؤ ــ
اردو لکھائی معذرت

Zinc Making For Agriculture, زنڪ ڪيئن تيار ڪجي

زنڪ ڪيئن تيار ڪجي ـــ
ڪافي وقت دوستن جي سوالن کي پڙھي محسوس پئي ٿيو ته اسين واقعن ايگريڪلچر جي دنيا م ڪيترا پوئتي آھيون ـ جتي اڀرندڙ دنيا نت جديد ٽيڪنولاجي مان لاڀ حاصل ڪري رھي آھي اسين اڃا ساڳيو ڏاڏن واري زماني جي رسمن رواجن موجب ڪم ڪري رھيا آھيون ــ گروپ م ڪجھ مخصوص تجرباڪار ڀائرن کانسواء سڀ پنھنجي پراڊڪٽ جي مشھوريت م پورا آھن ـ ان ٻوسٽ واري حال م ڪجھ پڙھيل رسرچ دوستن سامھون رکڻ مناسب سمجھان ٿو ـ
زنڪ ـ جیئن انسان کي پنھنجي واڌ لاء مختلف غذائون کپن ٿيون تھڙو ٻوٽن کي به واڌ ويجھ لاء خوارڪ جو ترتيبوار سلسلو گھرجي ٿو ، جن کي اول (پرائمری) عہ ثانوي (سیڪنڊري )خوراڪن م ورھايو ويو آھي ـ اين پي ڪي NPK ، اھي پرائمري خوراڪ سڏيون وڃن ٿيون جن کي ـ نائٽروجن، فاسفورس عہ پوٽاش سڏيو ويندو آھي ـ جڏھن ته ميگنيشم، ڪيلشيم، سلفر، زنک، ميگنيز، بوران، ڪاپر، آئرن، ڪلورائیڊ سيڪنڊري خوراڪون سڏيون وڃن ٿيون ـ مطلب تہ اول خوراڪ ٻوٽي جي لاء لازمي آھي جيڪا ٻوٽن کي ماحول مان عام جام ملندي آھي پر انسان لالچ جو گھر ھڪ سال م چار فصل کڻڻ جو عادي ٿي ويٺو آھي ان لاء ان کي مختلف ڀاڻ جو استعمال لازم ٿي پوي ٿو ـ ھاڻي اصل مقصد پنھنجي زنڪ تي اچون ٿا ـ
ٻوٽن م چار قمسن جي زنڪ جو استعمال ٿيندو آھي
زنڪ چيليٽس ( تقريبن 14%زنڪ)
زنڪ سلفيٽ (تقريبن25% کان 26% زنڪ)
زنڪ آڪسائیڊ ( 70%کان 80% زنڪ)
زنڪ فوليئرـ
ھنن سڀن مان زنڪ سلفيٽ جو استعمال سڀ کان وڌيڪ ٿيندو آھي ـ ٻوٽو سلفيٽ جي فارم سڀ کان وڌيڪ خوراڪ وٺندو آھي جيئن يوريا جي ڀيٽ م امونيم سلفيٽ،
زنڪ سلفيٽ اڇي ڪلر جو ڪرسٽل پائوڊر يا موتيء مثل ڌاڻو ٿيئي ٿو، ان کي ٻوٽن تي اڪيلو اسپري به ڪري سگھجي ٿو تہ ٻين ڀاڻن سان ملائي به ڏئي سگھجي ٿو ، زنڪ ٺاھن لاء اوھان کي ھيٺين ڪيميڪلن جي ضرورت پوي ٿي جيڪي مارڪيٽ مان عام جام ملي سگھندا آھن
زنڪ ايش ـ سلفيورڪ ايسڊ
زنڪ ايش ـ راخ جي صورت م ٿيئي ٿو جيڪو 60 کان 100 رپيا ڪلو م ملندو آھي جنھن جي پيورٽي 60% کان 85% ھوندي آھي ـ
سلفيورڪ ايسڊ گندھڪ جو تيزاب جيڪو تيار ھي 98.5 کان 99 جي پيورٽي تي ٿيندو آھي ـ جيڪو بہ 100 رپيا ڪلو جي حصاب سان ملي ويندو آھي
ھاڻي زنڪ تيار ڪرڻ لاء ھڪ ڊرم گھرجي جنھن م اندر ھڪ پکو لڳل ھجي ـ مطلب سلور جي ھڪ راڊ ھجي جنھن سان پکو لڳل ھجي ـ ياد رکجو تہ لوھ جي راڊ استعمال ناھي ڪرڻي ڇوتہ اھو پاڻي م رئیڪشن ڪري زنڪ آڪسائیڊ بہ ٺاھي سگھي ٿو ـ ان ڊرم م سلفيورڪ ايسڊ + زنڪ ايش + پاڻي(چار حصا) وجھجي، ڊرم اندر ان کي تقريبن پنج کان ست ڪلاڪ ھلائجي جيئن ان جو مڪمل ميلاپ ٿی وڃي، ان کانپوء ان کي ڊھڪي 48 ڪلاڪن تائين رکي ڇڏجي جنھن سان ڳرا مادا ھيٺ ٿي ويندا ان کي سيٽلنگ ٽائیم سڏبو ـ بعد م ھڪ ڪپڙي نما فلٽر رکي ان کي ڇاڻو ڪجي تہ زنڪ اوھان جي ھٿ م ھوندي ـ ھاڻي مارڪيٽ م مختلف پرسنٽيج % جھڙوڪ 5% , 20% , 33% سان اچي پئي اوھان 5 کان 33% جي وچ م پنھنجي زنڪ تيار ڪري سگھون ٿا ـ تقرين ٽ ليٽر تي اوھان جو 105 رپيا خرچ ايندو ــ

ڪورونا جو فائدا ــ

ڪورونا جافائدا ــ
جتي پوري دنيا خوف، حراث م ڦاٿل آھي، روز ھزارين ماڻھو ان جا شڪار پيا ٿين، ھڪ اھڙو طوفان جيڪو دين درھم کان بالاتر ٿي ھر ذات جي ماڻھوء تي مڪمل تباھي رسائي رھيو آھي جتي ماڻھو ذھني ڌٻاو جو شڪار ٿي رھيا آھن اتي اگر فطرت جي ڪمالن کي ڏسجي تہ ان پنھنجا الگ رنگ ھي پيش ڪيا آھن ــ فطرت پسيندڙن جي محفل م اڄ ويھڻ نصيب ٿيو ـ سوچان ٿو اگر ان کي لکي نه ورتم ته شايد وسريو وڃي، مناسب سمجھان ٿو ته موبائل کي ماڊرن ڊائري واري پريت طور جاري رکان ــ
ڳالھ کلي حادثاتي موت تان، جنھن لاء ھڪ واقعو پيش ڪيو ويو ته قبرستان وڃڻ ٿيو، سامي ٺاھڻ واري سان حال احوال اورڻ لاء پڇيو ته ڪیئن ٿو گذر سفر ٿيئي ته جواب آيو تہ سائین مزو ناھي، ماڻھن جو مرڻ گھٽ ٿي ويو آھي جتي روز ماڻھو ايڪسيڊنٽ يا ڪنھن وڏي بيماريء م مريو وڃن ھاڻي تہ گاڏيون به بند آھن ٻيو ته اسپتالن م به ننڊي بيماريء کي ٽڪو نه ليکن، مطلب ته اسان جي روزي سامي ٺاھڻ آھي فلحال روزيء م مزو ناھي، ـــ ھاڻي خيالن جي ڏي وٺ م ھر ڪنھن کي پنھنجو ڪردار ادا ڪرڻو ھو ته مٿان آواز آيو سائین فطرت پنھنجي اصلي حالت جنھن م سڪون ھيو ان ڏانھن واپس وري رھي آھي ساٰئنسدان چون ٿا ته “اوزون” ليئر دنيا م گھٽ آلودگيء سبب ڏينھون ڏينھن پنھنجي شفافيت طرف اچي رھيو آھي، جتي ڪجھ وقت اڳي ماحولياتي ادارا وڻ پوکڻ آخري حل سمجھي رھيا ھئا فطرت اُھي انتظام پنھنجي وس وٺندي پنھنجي اصل حُسن طرف گامزن ٿي چڪي آھي ــ سائین! جن ملڪن کي ايٽم بم تي ناز ھيو، جنھن سمورا پئسا انسانذات کي ختم ڪرڻ لاء مختص ٿي ڪري ڇڏيا ھاڻي ته اُھي به خود تباھ پيا ٿين ان جي ڪا خاص اھميت نٿي رھو ڇو ته ھن وائرس کي بايولاجيڪل وار ٿا سڏن مطلب ته اھي جراثيم ليبارٽري چڪاس يافتہ آھن، اھي وائرس ته ٺاھڻ به آسان آھن جيئن سائنٽيفڪ فلمون اڄ کان اٺ سال پھريان آيون ھاڻي اُھي شايد عمل جي مرحلي م داخل ٿي چڪيون آھن، شايد اسين پنھنجي ماضيء کان وڌيڪ احتياطي تدابيرون استعمال پيا ڪريون ـ بار بار صابڻ سان ھٿ صاف ڪرڻ، مختلف سينيٽائزز استعمال ڪرڻ، زرعي ملڪ ھجڻ سبب اسان وٽ ھن وقت عام جام ٿريشر پيا ھلن جنھن سان ھر ماڻھو زڪام بخار سان دم جو مريض ٿيو وڃي ان لاء به اسين ماسڪ جي صورت م پاڻ کي ڪنھن حد تائین بچائڻ جي ڪوششون پيا ڪيون، صفائي نصف ايمان آھي پيغمبرسائین اسان کي پھريان ٻڌائي ويا آھن اسان کي فقط انھن تي عمل ڪرڻو آھي موسم گرما جي ڪري ٿڌي پاڻي تمام گھڻو استعمال ٿيندو آھي جيڪو بہ ھن وقت ڪافي گھٽ ٿي چڪو آھي ـ اچو تہ ماڻھن اندر اميد جو روح ڦوڪڻ م پنھنجو ڪردار ادا ڪيون، ايئین نه ٿي جو گھڻي دير ٿي وڃي عہ اسين ذھني توازن برقرار نه رکي سگھون ـــ

خواب کہ ملاقات


کوئی وقت تھا کے ایک دوسرے کو دیکھتے اور محلے کی آخری گلی تک بس دیکھتے ہی رہ جاتے تھے، اور دوسرے دن کی شروعات تک ایک میڈیسن کا ڈوز مل جاتا ہوتا تھا، کوئی حوس کی بھوک نہیں ہوتی تھی، جی چاہتا تھا کسی طریقے سے دل کی آواز بس محبوبوں تک پہنچتی رہیں ، وہ ہمارے بارے میں سوچتے رہیں ہم ان کے لیئے اور ایسے وقت گذرتا جائے ، لیکن کہاں گئی وہ رونقیں یار کی کہاں گیا وہ وقت جس میں اپنے پاس بس وقت تھا ایک دوسرے کے لیئے، تم کسی اور کی سیج تو بن گئی، قسمت کا فیصلہ دل سے قبول بھی کیا لیکن نادان دل کا کیا کریں جس میں یاد تیری اب بھی سمائی ہوئی ہے، دل بھی کوئی یادوں کا خزانہ ہے، البتہ بنا کلک کے اپنی مرضی سے جیسی کیفیت چاہے منہ پر نشاور کردیتا ہے کچھ ایسی ہی بیچینی رات کے خواب بعد پیدا ہوئی ـ
پتا نہیں کوئی بی ایس سی ٹائیپ پیپر دے رہے ہیں، وہی آنکھیں تمہیں دیکھ کے گم ہوجاتی ہیں، اب آنکھوں کا جام پینے سے کہاں دل رکنے کو کرتا ہے ، خدا کی قسم یے بہت لذیذ نشہ ہے، لیکن پیپر بھی چھاپنا ہے لحاظا سلام ہوتا ہے اور حال چال پوچھنے شروع ہوجاتے ہیں
کیسی ہو ـ
ٹھیک ہوں، تم کیسے ہو؟
اچھا ہوں، سانس چل رہی، پیٹ بھرا وا ہے،
تم یہاں کیسے؟
بس جب یونیورسٹی سے نکلا تب سے اب تک کسی پیپر میں گورنمینٹ جاب کی ویکنسی اپنی فیلڈ ریلیٹڈ نہیں دیکھی، اس لیئے سوچا مفت کی ڈگری لے لوں شاید آگے کوئی کام بن جائے،
اچھا! !! اور تم؟
میرا فارم بھی میرے میاں نے زبردستی بھرا ہے، کوئی ماسترنی کی جگہ آئی تو اس کے لیئے کوشش کروں گی،
چلو اچھا ہے، اب پیپر کے لیئے آئے ہیں تو کردیتے ہیں ـ
زندگی مشکل ہوگئی ہے نعمان —-
ہاں تو زندگی کٹہن راستے کا ہی نام ہے،
میرا مطلب ہے جلدی شادی جیسی رسم میں اپنے آپ کو ایڈجسٹ کرنا میرے لیئے اسٹریس کا شکار ہے، میں ماسٹرس کرکے کے شہر کی زندگی سے پھر گاؤں آگئی ہوں یہاں میری امیدوں سے سب الگ ہے، وہی رشتوں میں قید لوگ اور ہر کام میں ٹانگیں اڑانا سب کی عادت ہے یہاں،
تو تم شہر کیوں نہیں شفٹ ہوجاتی؟
مجھے پاس والے شہر میں ہی ایک ٹیچر اسسٹنٹ کی نوکری مل گئی ہے روز آتی جاتی ہوں، میاں ابھی تک کسی نوکری میں نہیں اس لیئے چرخا چلانا ہے،
لیکن تم تو کہتی تھی تمہیں ہر حال میں شہر پسند ہے،
نعمان صاحب! !!
یے صاحب کیوں؟
دکاندار ہو اپنی مرضی سے جیتے ہو ، اور دنیاوی چار پیسے بھی ہیں اس لیئے صاحب، ہاں تو صاحب جی گھر والوں کو میری عمر کی بڑی فکر تھی ابھی شادی کروں دوسرا وقت پھر آئے اور ایسے بس شادی ہوگئی لیکن میں خوش نہیں ، مجھے سب سوکھا سوکھا سا لگ رہے، قسمت مجھے وہ سب دکھا رہی ہے جس کا مجھے غرور ہوتا تھا
اللہ سے معافی مانگو، سب ٹھیک ہوجائے گا، پیپر کرو میں بعد میں ملتا ہوں،
اور ایسے صبح ہوگئی ـ خواب ھمیشہ کی طرح اپنی رسم رواج برقرار رکھے ہوئے” مکمل ” نہ ہو سکا ــــ

Dream Meetup

بیگم جان ـ Baigum Jaan

مجھے خاص فلمیں دیکھنے کا شوق نہیں تھا لیکن فیسبوک پر موویز پلانیٹ نامی گروپ

سے جس بھی قسم کی مووی کے بارے میں پڑھو تو اک تڑپ سی اٹھ جاتی ہے بہت کوششوں بعد کہیں نہ کہیں سے وہ مووی مل جاتی ہے اور ایسے دل کو ٹھنڈک پڑھہ جاتی ہے ـ جب کبھی دوستوں کی پوسٹیں دیکھتا فل فور دل میں اک تڑپ اٹھتی آخر کبھی تو ہم سے بھی کچھ لکھا جائے، ٹھیک اسی طرح دل کو قابو نہ پاتے آخر مجھے بھی ایک ایسی مووی مل گئی جس کے بارے میں اپنے خیالات آپ سب سے شیئر کروں ـ
ہاں تو دوستو ودیا بالن کی مووی ” بیگم جان ” جس کے نام میں بیگم کے ساتھ صاحبہ نہیں لیکن میں دل سے اس کو بیگم صاحبہ بلانا چاہوں گا کیوں کے اس میں ودیا بالن کا کردار ایک بیگم صاحبہ کا ہے جو درحقیقت ایک کوٹھہ چلاتی ہیں وہاں کی ہیڈ ہوتی ہے، یے کہانی بٹوارے کے دؤر کی ہے ،جب انگریز ھندستاں کو چھوڑ جاتے اور ریڈ کلف ایواڑڈ پیش ہوتا جس کا مطلب پاک اور ہند کی بیچ سرحد بنانا تھی ـ بدقسمتی سے یے کوٹھہ ٹھیک اسی جگہ آتا جہاں سے بارڈر نکالنا تھا ، گورنمینٹ اپنے نمائندے بھیج کر بیگم صاحبہ کو سندیس پہنچاتی ہیں کے آپ کے یے جگہ کھالی کردے ، ساری کہانی اس کے چوگرد گھومتی ہے، اس کہانی میں ایک کوٹھے پر کیسے معصوم عورت پہنچتی ہے اور اس کو خرید کے تیار کرنے تک سب دکھایا گیا ہے، مزے کی بات ہر بندہ جو سوچتا ہے کے طوائف کبھی دل نہیں لگاسکتی اس کو سرعام دکھایا گیا ہے کے فطرط کا اصول یہی ہےعورت یا تو دل نہیں لگاتی اگر لگائے تو اپنا تن من سب قربان کرنا بھی جانتی ہے ، میں زیادہ آپ کا ٹوئسٹ خراب نہیں کرنا چاہتا لیکن فھرست ملے تو ایک بار ودیا کا کردار اس مووی میں ضرور ملاحضہ فرمائیں امید کرتا ہوں آپ کو پسند آئے گا ـ
نوٹ ـ معزرت کے ساتھ اردو لکھاوت اتنی اچھی نہیں لحاظا لبولباب کی بات پر ضرور متوجہ فرمائیے گا ـ
والسلام ـ

جدید دؤر جا ھاري ـ

ھن وقت دنيا جا ملڪ چنڊ تي پھچي زمينن جي ورھاست ڪرڻ م مصروف آھن ته ساگيئي وقت ڌرتيء جي گولي تي آباد زمين مان وڌيڪ لاڀ حاصل ڪرڻ لاء ڏينھن رات ھڪ ڪري جديد ٽيڪنولاجي جو استعمال ڪري رھيا آھن ـ روز روز نوان فصل متعارف ڪرائي ملڪي معيشت م ڀرپور حصو ونڊي رھيا آھن ـ ھر نئین صبح نت نيون مشينون متعارف ڪرائي مڪمل طور پنھنجي زمينن کي آباد ڪري رھيا آھن جنھن م ڪيئڻ ٿالھي، روٽاويٽر کان ويندي زمينن جي گُڏ، لابارا، اسپري، چونڊا سڀ جا سڀيئي جديد دؤر م مشينن زريعي ٿي رھيا آھن ـ ساڳي وقت جديد دؤر جا ھاري ان مشينريء کي ڏسي پنھنجون محنتون ڇڏائي ويا آھن ـ پھريان جڏھن اھي ساڳيا ھرَ ڏاندن گابن تي ٿيندا ھئا ته ھڪ محنت جو جذبو ان اندر قيد ھوندو ھئو تہ مون ان ڀٽاري زمين کي ڪيتري محنت سان کيڙي تيار ڪيو آھي، پر ھن وقت ان جي ابتر ٽريڪٽر اچي ويا آھن جيڪي دير ناھي ھڪ ڏينھن م ڪم تيار، ان کي غلط نہ سمجھيو ويندو، ان ڳالھہ کي مڃڻ م به ڪا ڪثر نہ لاھبي تہ ان مشينريء جو فائدو آھي، بلڪل! فائدو آھي پر اسان جو تعلق ان ھاري ناريء سان آھن جيڪو ان کي کيڙڻ سان گڏ ان م پنھنجو پگھر ڳاريندو ھئو عہ زمین ان جو قدر ڪري ان کي غريب ھاريء جا ڳوڙھا سمجھي پي ويندي ھئي ـ

ھن وقت سراسري ھڪ ايڪڙ تي چوويھ ھزار رپيا پاڪستاني خرچ آھي ـ جنھن م ھر کان ويندي ٻج ڪلر، دوا شامل آھي ان جي موٽ م ھاريءَ کي مشڪل سان پنج ھزار بچن جي نه ته قرض بہ نه لھي ـ آخر ان جا ڪھڙا سبب آھن جڏھن ان تي ريسرچ ڪري مختلف زميندارن ھارن جا نظريا ٻڌا تہ ڪجھ ڪلر دوا جي مھانگي ھجڻ تہ ڪن ڪلر دوا کي ٻہ نمبر قرار ڏئي ڳالھ کي تمام ڪيو، ھڪ اڌ جي راء ھاري نبھاگي ھجڻ جو چيو، آخر مون بہ جائزو ورتو ته سمجھ م آيو ھاريء کي پنھنجي محنت ھي ماري ان جو حصو پتي گھٽ پيون ڪيو وڃي ـ ھتي اوھان کي ٿورڙو ھڪ نظر وؤنئڻ جي حصاب ڪتاب ڏانھن وٺي ھلڻ مناسب سمجھندس ـ

زمين کيڙڻ کان ويندي ڀاڻ، دوا ڏيندي وڃي لڙڻ تائين جو خرچ سراسري چوويھ ھزار آھي جنھن م ھاري گُڏ بہ پاڻ نہ ڪري جيڪا به مزدوريء تي ڪرائي، ڪجھ جا تہ دوا ڪندي ھٿ سڙيو پون يا انھن کي سھڪو ٿيئي سي اسپري به مزدوريء تي، وري جڏھن فصل پچي راس ٿيئي تہ لڙن يا چونڊو بہ مزدوريء تي ـ مثال ھڪ ايڪڙ مان ٽيھ مڻ ڦٽي لٿي، جنھن م ڪلر دوا جو تہ بل ھوندو ھي پر ان سان گڏوگڏ گُڏ، چونڊو بہ لازمي ھونديون، ھڪ مڻ تقريبن پنج سؤ م چونڊجي مطلب تہ ٽيھ مڻن جا پندرنھن ھزار بہ ڳاٽي م فٽ ٿيندا، ھاڻي اھڙي حالت م ھڪ ھاريء کي آخر بچي ته ڇا بچي ـ ھن وقت اسان سڀن جو اھو فرض آھي تہ ھاريء کي ان جو قائل ڪيو وڃي تہ اوھان جي گھٽ محنت اوھان جو حق ماري رھي آھي، لحاظا ان پراڻي محنت کي پنھنجي رڳن م کڻي اچو جنھن سان اوھان تہ نالو ھاري مطلب ھر ھلائیندڙ يا زمين کي ٺاھيندڙ ان کي آباد ڪندڙ پئجي چڪو آھي ـ اوھان جي محنت اوھان جو رتبو وڌائیندي ـ اوھان کي دنيا آڏو سرخرو ڪندي ـ

زندگي عہ عبادت

25-04-2018


زندگيء م عبادتن جو ھجڻ لازمي آھي، ان کانسواء انسان ڌوپجي نٿو سگھي، پاڪيزگي عہ سرھاڻ بنا عبادت ممڪن ناھي ـ عبادت جو مطلب ھيٺانھين ڪرڻ آھي، ڪنھن جي لاء قرباني ڏيڻ به عبادت آھي پر شرط ته خاص ھڪ ربّ جي قربت حاصل ڪرڻ لاه ھجي، جي ھيٺانھين فقط ڏيکاءَ خاطر آھي ته مطلب اُھاعبادت قربت نه پر ڏورانھن وٺي وڃڻ جو ڊگھو رستو آھي ڪنھن کي فقط پيار جي نگاھ سان ڏسڻ مطلب ربً جي تخليق جي تعريف ڪرڻ به عبادت آھي پر شرط ته اُھا حيواني حوسي سوچ کان پاڪ ھجي، انسان کي پنھنجي نفس سان ھروقت جنگ ڪرڻ گھرجي، ھر لذت واري شيء کي پٺتي رکي تڪليف جو رستو اختيار ڪرڻ گھرجي ان سان ھو فقط ڏکن، دردن ،غمن جو عادي نه ٿيندو بلڪِ قدرت جي آزمائش کی به منھن دليري سان ڏيندو ايندو، درحقيقت اھو ھي ھڪ جانبدار رستو آھي جنھن سان انسان کي دلي سڪون حاصل ٿيندو آھي جيڪو لذتن کان پاڪ ھوندو آھي ڇو جو سڪون عہ لذت م فرق آھي لذت ھڪ نشو آھي جنھن جي عمر ٿورڙو وقت ھوندي آھي ان نشي جي پويان انسان ڀڄنڌي ڊوڙندي حقيقي سڪون کي وڃائي وجھندو آھي خالص عبادتن سان ھي اصل سڪون آھي عہ اُھا خالصيت محبتون ونڊڻ، دل مان ڪينا ڪڊي پاڻ وساري اجتماعيت لاء جيئڻ سان ايندي آھي ـ اچو ته ٻين لاء جيئن جو وچن پنھنجو پاڻ سان ڪريون عہ زندگيء کي ھر دم عبادت بڻايون ـــ

ہنگورجہ، نوجواں اور “یوم صفائی”

صفائی نصف ایمان ہے، اپنی صفائی کے بعد لوگوں میں صفائی کا رجہان ڈالنا جہاد ہے، اور یے جہاد شروع کرنے نکلے ہیں خیرپور ضلع کے نوجواں،

خیرپور ضلع کے ایک چھوٹے سے ہنگورجہ نامی شہر میں نوجواں قاسم میمں، نوید میمں ، ایاز میمں اور میر عادل کی قیادت میں پورے محلے کی صفائی کرنے نکلے، انہوں نے سوشل میڈیا پر اپنے محلے کے لیئے پرجوش مہم چلائی جس کا نام “یوم صفائی رکھا گیا، جس کو اس جمعرات عملی جامہ پہنایا گیا، شروعات میں نوجوانوں نے خد جھاڑو اٹھا کے اپنے گھروں سے اس ایماں کی شروعات کی ،ٹھیک اسی دن وہ ٹاون آفیسر کے پاس گئے اور وہاں سے پورا عملہ ساتھ لے کر مختلف مشینری سے پورے محلے کی صفائی کا کام کروایا، نوجوانون کی پرجوش جدوجھد کو دیکھ کر شہر کی ہر کمیونٹی سے تعلق رکھنے والے باشعور لوگوں نے ان کا ہاتھ بٹایا، صفائی کے بعد پورے محلے میں روشنی کے لیئے اسٹریٹ لائیٹس لگائی گئی، جس کی وجہ سے ہر چھوٹے بڑے میں خوشی کی لہر تھی، نوجوانوں سے جب بات چیت کی گئی تو انہوں نے بتایا کے یہاں صفائی والے اپنے حساب سے آتے ہیں جب کوئی سیاسی نمائندہ کسی شادی غمی میں آتا ہے تب صفائی کا عملہ بھیجا جاتا ہے بعذ اوقات جب شہر کے لوگ ٹائون جاتے ہیں تو ان کو عملہ دیئا جاتا ہے، خوشی کی بات یے تھی کے وہی نوجواں انجینئر، ڈاکٹر اور اساتذہ بھی تھے نوجوانوں سے مزید بات کرتے انہوں نے بتایا کے ہم اپنے پورے شہر میں یے مہم چلانے کا عزم رکھتے ہیں، اور ہم ایک مثالی شہر چاہتے ہیں جس میں ہمیں صفائی، تعلیم، اور صحت کی مختلف مہم چلانے کے لیئے کوشاں ہیں، اور ہم کچھ دنون میں شہر میں پلانٹیشن کی مہم چلانے کے لیئے نکلیں گے، ہم بتاتے چلیں کے یے نوجواں میمن کمیونٹی سے تعلق رکھنے والے ہیں، ان کا عزم و اعتماد دیکھ کر دل کررہا تھا ان کی محنت کو سب نوجوانوں کے سامنے لایا جائے تاکے پاکستان دکھے صاف ستھرا اور سرسبز ـ

والد محترم جو ڏھاڙو (2018)

والد محترم 😘

بابا لفظ ھڪ دعا آھي، ان جي احساس م لڪيل سڄو جھان آھي، جڏھن بابا لفظ زبان تي ايندو آھي يقين ڄاڻو ان وقت ھر شيء سامھون ھجڻ جو ثبوت ڏيندي آھي، مطلب ته اوھان جا خواب سڀ جا سڀ پورا ٿي وڃڻ جو وقت سامھون ٿي پوندو آھي، ايئین کڻي چئجي ته قدرت واري کانپوء اوھان جي تقدير مٽائڻ واري شخصيت فقط والد محترم آھي، ڇوجو والد محترم اُھا واحد ھستي آھي جيڪا اولاد جي لاء پنھنجون سموريون خواھشون قربان ڪري ڇڏيندي آھي،

ڀلا جي آءُ پنھنجي ذات م جھاتي پائي ڏسان ته ”

منھنجي ڪھڙي اوقات بنا نالي تنھنجي
منھنجي ڪھڙي ھاڪ بنا نالي تنھنجي
منھنجو ڇپرو ، ڇانوَ به تــــــــــــــون
منھنجو گل، باغيچوبه تــــــــــــــــون
منھنجومجازي سرداربه تــــــــــــــــون
اھا ھڪ حقيقت آھي ته ھن وقت تائین مونکي والد محترم جي نالي ساڻ سڃاتو ويندو آھي ڇوجو ھن سماج جي ڀلائيء م منھنجي ٽڪي برابر به جستجو ناھي، اسان وٽ ھڪ الميو رھيو اھي ته وئي کانپوء ھي انسان جي قدر ٿيندي آھي پوء کڻي اھو پيءُ ھجي يا ماءُ، رشتيدار ھجي يا غير، اديب ھجي يا ليڊر، ھميشه انھن کي مرڻ کانپوء ھي ڀيٽا پيش ڪئي ويندي آھي باقي جھان جا رشتا پنھنجي جڳھ تي پر والد عظيم جھڙو رشتو انسان لاء وڏو عظيم رشتو آھي، جڏھن انھن جو ساٿ ڇڏجي ويندو آھي ته انسان جي چيلھ ڀڄي پوندي آھي ڇوته انسان جو دنيا سڀ کان وڏو حامي ان جو والد محترم ھوندو آھي ان لاء منھنجا محبوب پڙھندڙ جنھن تنھنجو والد محترم ھن جھان م آھي ته ان جو ٻانھن ٻيلي ٿي ان جي خدمت ڪري پاڻ به دعائون کٽينڌو وڃ، اگر اُھي ھن جھان مان لامقام طرف ھليا ويا ته انھن جي لاء دعائن جو ذریعو بڻج، اڄ انھن کي تنھنجي دعائن جي سخت ضرورت آھي